en-USur-PK
  |  
07

اسلام میں بت پرستی اورذاکر نائیک کی چشم پوشی

posted on
اسلام میں بت پرستی اورذاکر نائیک کی چشم پوشی

Idol Worship in Islam

اسلام میں بت پرستی اور

ذاکر نائیک کی چشم پوشی

اسلام میں بت پرستی ایک ایسا موضوع ہے کہ کم وبیش ہردور، ہر صدی ، بلکہ خود حضور  کی زندگی میں ایک مسئلہ کی صورت میں اتم موجود رہا۔ تاریخ گواہ ہے کہ حالات کے ہاتھوں مجبور ہوکر ، مصلحت کے تحت ، برخلاف مشیت ایزدی ، حضور  نے اللہ تعالیٰ کی مخالفت مول لے لی۔ قصہ کچھ یوں ہے کہ جب رسول اللہ  نے یہ دیکھا کہ آپ  کی قوم نے آپ سے پیٹھ موڑ لی ۔ آپ  پر ان کی اس دن سے دوری جو دین آپ  لائے تھے ، آپ  پر سخت شاق گزری۔ آپ نے دین میں یہ تمنا کی کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سی ایسی بات پیدا ہو جو آپ  کے اور آپ کی قوم کے درمیان قرب پیدا کرے۔ یہ آپ  کی اس حرص کے باعث تھا جو آپ کے دل میں ان کے ایمان لانے کے لئے موجود تھا۔ آپ کے دل میں یہ خواہش پیدا ہوئی کہ اس دن اللہ تعالیٰ کی طرف سے کوئی اسی بات پیدا نہ ہو جس سے یہ لوگ بدک جائیں۔ آپ  نے اس بات کی تمنا کی ۔ تو اللہ تعالیٰ نے سورہ نجم نازل کی۔  (اسباب نزول قرآن، صحفہ۲۹۸) جب آپ  آیتہ ۲۰ پر پہنچے تو شیطان نے آپ  کی زبان پر آپ کے نفس میں پیدا ہونے والی بات اور آپ  کی تمنا آپ کی زبان پر جاری کرادی۔ جب قریش نے یہ کلمات سنے تو وہ خوش ہوئے ۔ رسول اللہ  سورت پڑھتے گئے اور آپ نے ساری سورت پڑھ ڈالی ۔ آپ  نے سورت کے آخر میں سجدہ کیا۔ مسلمانوں نے آپ کے ساتھ سجدہ کیا۔ ان کے ساتھ مسجد میں جتنے بیٹھے تھے سب نے سجدہ کیا۔   (اسباب نزول قرآن، صحفہ۲۹۸)۔

جدید مورخین کے مطابق ایک مورخ کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ کسی بھی آنکھوں دیکھے واقعہ کو اپنے حال کی روشنی سے منور کردے، یا یوں کہہ لیجئے واقعہ کو تحریر کرتے وقت اپنے جذبات کا خلاصہ بھی تحریر میں شامل کرلے۔ بظاہر ایسا لگتا ہے کہ بتوں کے آگے سجدے میں گرنے کے حضور کی قطعی کوئی مرضی شامل نہیں تھی، بلکہ شیطان نے انکی دل کی خواہش کو جو کہ اللہ تعالیٰ کی مرضی کے خلاف تھی استعمال کیا۔ لیکن اس بات کا  کیاکیجئے کہ اگر ہم اس تاریخی واقعہ میں سے مورخ کی جذباتیت کو نکال دیں اور حضور کی زندگی سے جڑے دیگر واقعات کا احاطہ کریں تو یہ ظاھر ہوجائیگا کہ حضور  کہ بت پرستی سے اجتناب حضور  کے لئے کسی طرح سے بھی ممکن نہ تھا ۔ بخاری شریف میں ابن عمر سے روایت ہے کہ دعویٰ نبوت کے بہت برسوں پہلے خود آنحضرت بہ نفسِ نفیس ایک مرتبہ پکا ہوا گوشت زید بن عمر و بن نفیل کے پاس تحفہ میں لے گئے تھے مگر اس نے اس گوشت کو کھانے سے انکار کیا اور آپ  سے کہا میں نہیں کھاتا جس کو تم لوگ اپنے بتوں پر ذبح کرتے ہوا اور جس چیز پر اللہ کا نام نہیں پکارا جاتا اور اس کو میں ہرگز نہیں کھاتا اور وہ قریش کے ذبیحوں کی برائی بیان کرتا تھا۔ (تاویل القران، صحفہ ۱۳۱۔ ۱۳۰اسکے علاوہ سلطان المناظرین جناب اکبر مسیح صاحب اپنی شہرہ آفاق تصنیف ( تاویل القرآن صحفہ ۵۷)کے حاشیئے میں ایک مولوی بنام عبداللہ چکڑالوی کی تحریر کا حوالہ دیتے ہوئے فرماتے ہیں کہ ’ آنحضرت سے فعل شیطانی سرزد ہوئے جن کی تعداد اٹھارہ تک پہنچتی ہے ۔(اشاعتہ القرآن، صحفہ ۱۳) جناب اکبر مسیح ان حوالہ جات سے یہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ آنحضرت کے خیال اور قیاس اور آرزو میں القاء شیطانی موجود تھا۔ اس پر مستزاد یہ کہ جناب موصوف ڈاکٹر ذاکر نائیک اپنی کتابچہ کے صحفہ نمبر ۱۰ میں حضور  کی زندگی سے جڑے ایک ایسے واقعے کا ذکر کرتے ہیں جہاں یہ لکھا ہے کہ جب حضرت عمر ؓ نے حجرا اسود کو بوسہ دیتے ہوئے کہا  ’ میں جانتا ہوں کہ تو صرف ایک پتھر ہے نہ تو فائدہ دے سکتا ہے اور نہ ہی نقصان اگر میں نے نبی کریم کو تجھے چومتے ہوئے نہ دیکھا ہوتا تو میں تجھے کبھی نہ چومتا ۔ (اسلام پر چالیس اعتراضات اور ان کے مدلل جوابات، صحفہ نمبر۱۱۔ ۱۰) لیکن یہاں ایک سوال اٹھتا ہے کہ کیا اس وقت بھی حضور کسی سحر کے زیر اثر تھے ؟ اور یہ کہ جو بات حضرت عمر ؓ کو بری لگی ، حضور کی سمجھ میں کیوں نہ آئی، اور اب تک مسلمان اس بات کو کیوں نہیں سمجھ پائے کہ حجرااسود نہ تو فائدہ دے سکتا ہے اور نہ ہی نقصان! دوستو، اسی کو بت پرستی کہتے ہیں ، جہاں اللہ کی غلامی کا تصور اتم موجود ہو تو پھر سوال کی کوئی گنجائش نہیں ہوتی ، اسی لئے آپ کے ہاں صحیح سوال سوچنے کی کوئی سندی روایت موجود نہیں، اسی لئے آپ بت پرستی میں مبتلا ہیں ۔ شکریہ !

 

 

Posted in: اسلام, مُحمد, غلط فہمیاں, تفسیر القران | Tags: | Comments (12) | View Count: (11737)

Comments

  • بھائی سعد کے نام بھائی سعد آپ نے دعوی کیا ہے کہ اسلام میں اللہ کے سوا سجدہ حرام ہے تو پھر آپ خود ہی ہمیں بتائیے کہ حضرت آدم کو فرشتوں سے سجدہ کروانے میں اللہ تعالیٰ کی کیا حکمت پوشدہ تھی، لیکن اگر کوئ حکمت پوشیدہ تھی بھی اللہ تعالی کو ایسا کام کرنے کی کیا ضرورت آن پڑی کہ فرشتوں سے گناہ کبیرہ کروا ڈالا؟
    28/09/2014 10:25:44 PM Reply
  • بھائی سعد کے نام بھائی سعد آپ نے دعوی کیا ہے کہ اسلام میں اللہ کے سوا سجدہ حرام ہے تو پھر آپ خود ہی ہمیں بتائیے کہ حضرت آدم کو فرشتوں سے سجدہ کروانے میں اللہ تعالیٰ کی کیا حکمت پوشدہ تھی، لیکن اگر کوئ حکمت پوشیدہ تھی بھی اللہ تعالی کو ایسا کام کرنے کی کیا ضرورت آن پڑی کہ فرشتوں سے گناہ کبیرہ کروا ڈالا؟
    28/09/2014 10:22:06 PM Reply
  • Mery bhi mai aik Muslim tha lakin meri ankhain molveyon ne band kar rakhe the,serf Arbi zaban ki talemat the jen chezo ka hamin kuch pata nahi tha kah en kah mani keya hai,Mery Muslman bhayo ko chahye kah ankhain kholain.Hadith kuch kehte hai or Quran kuch kehta hai.Surah fatah No 48 or verse 2 mai wazeh lekha geya hai kah Muhammad gunahgar thay.Gunah woh hota hai jo , Allah ki ki nafarmani karay.or Muhammad ne nafarmani ki,us ka sabot wazeh hai,Surah tehreem 66 Ayet No 1-4.Hejre aswad bhi koi janat ka pather nahi hai.Agur ap history ki books parain to Khana Kaba pehly shive ka munder tha.Or ap log jes stone ko chomty ho woh darasl shive ka Ala- e-tanasul hai,Sub Musalman bhi bot ki poja karty hai.yeh haqekat hai.
    15/09/2014 12:22:13 PM Reply
    • @Muhammad Ishfaq: @Muhammad Ishfaq: Dear Bahi Ishfaq aap k comments ka bhut shukria aap ney farmiya hai k aap phely muslim they lekin mulavies ney aap ki ankhoon ko khool diya and us key saath hi aapney sura 48 ka reference bhi deiya.Aap ko is baat ka ilem hoga ke sirf hazrat Issa ke sub prophets gunhagar they.Quran ki Sura 46 ki verse 9 main bhi lekha hai ke Hazrat Muhammad kisi ko bhi bacha nahi saktey.Lekin Hazrat Issa sirf ghunagarro ke bacah saktey hain.Bahi Kiya app ney Injeel Pari hai aur aap ka taluq kidher sey hai aagar aap ko injeel ki zarrorat hai tu hum aap ko bhej sektain hain.
      17/09/2014 5:50:52 AM Reply
    • @Muhammad Ishfaq: Dear Bahi Ishfaq aap k comments ka bhut shukria aap ney farmiya hai k aap phely muslim they lekin mulavies ney aap ki ankhoon ko khool diya and us key saath hi aapney sura 48 ka reference bhi deiya.Aap ko is baat ka ilem hoga ke sirf hazrat Issa ke sub prophets gunhagar they.Quran ki Sura 46 ki verse 9 main bhi lekha hai ke Hazrat Muhammad kisi ko bhi bacha nahi saktey.Lekin Hazrat Issa sirf ghunagarro ke bacah saktey hain.Bahi Kiya app ney Injeel Pari hai aur aap ka taluq kidher sey hai aagar aap ko injeel ki zarrorat hai tu hum aap ko bhej sektain hain.
      17/09/2014 5:47:28 AM Reply
  • Hzarat khatija (RA) ka cuision yahoohi alam tha or Nabu E Pak ko dekh kar behosh ho gaya or kaha k Nabowat Bani aisrail se chin gae. Ye wo hawale hain jo Christain log ignor kar dete hain. Islam tamam Nabion ko izzat o ikram deta hai jab k Christian Muhammad PBUH ki toheen karte hain, jesa ke zindgi tv k tamam programmes me moujood hai. Alhamdo Lillah Islam qabool karne wale logo ki tadad dunya me sab se ziada hai. https://uk.answers.yahoo.com/question/index?qid=20130310221533AAbSANp and www.cnn.com/WORLD/9704/14/egypt.islam/ kuch to sharam karo
    01/07/2014 6:59:10 AM Reply
  • Ye Pori taqreer sirf 1 nafrat zada insan ki he, Jo Apni nafrat zahir karne ke lye esi baten Dhondta he. Jin se wo koi Ulta Matlab Le Sake. Tamam Parhne Walo se Guzarish he ke Ye Jaan len Allah and Allah ke Man-ne wale kisi Bi Allah ke Rasool ki is tarha gustakhi nahi karte. Har Nabi (Rasool) ki Ummat me kuch shetan log Unki Baton ko Badal ke Baqi Sada Logon ko Gumrah Karte hen. Allah ke kisi bi Nabi(Rasool) ko Bura kehne wala Gumrah ho chuka hota he. Is se pehle ke wo kisi bi Khudai Mazhab ko Man-ne walo ko Gumrah Kare. Allah ki Taraf se Hukum he ke Us Murtad ko Qatal kar Diya jaye. To Jo bi Esa Gumrah Apke Same Mile Use Samjaya Jaye Agar Na Samje to Allah Ka Hukum Mojood he Uske Lye.
    05/06/2014 7:03:01 AM Reply
  • Allah (swt) says in Quran that he created human beings from the progeny of Adam (as) and made them witness over themselves and asked them, 'Am I not your creator?' Upon this, all of them confirmed it. Thus Allah wrote this confirmation. And this stone has a pair of eyes, ears and a tongue and it opened its mouth upon the order of Allah (swt), who put that confirmation in it and ordered to witness it to all those worshippers who come for Hajj ibn Abd-al-Malik al-Hindi, Ali (1998). Kanz al-Ummal. Lebanon.
    12/04/2014 4:01:51 PM Reply
  • It is in Hadith - Narrated by Ibn Umar (رضئ اللہ تعالی عنہ) He said: I heard the Messenger of Allah (صلى الله عليه و آله وسلم) say: “Touching them both (the Black Stone and al-Rukn al-Yamani) is an expiation for sins.” (Tirmidhi - 959. This Hadith was classified as Hasan by Tirmidhi and as Saheeh by al-Haakim (1/664) and ad-Dhahabi agreed with him)
    12/04/2014 3:52:43 PM Reply
  • Ibn Hibban has reported in his Sahih that the Prophet (saws) said: "(Making supplications near) the Black Stone and the Yemeni corner cause the sins to be forgiven."
    12/04/2014 3:50:24 PM Reply
  • Hazrat Muhammad(saw) nay hajr e aswad ko bosa dia ,sajda nahi kia or na hi us ki ibadat ki .or sb musims hajr e aswad ko bosa de kr sunnat puri krtay hain.hajra e aswad asal main jannat ka pathr hai.is ka bot prsti se koi talluq nahi hai.
    28/03/2014 9:17:53 AM Reply
  • Islam main Allah k elawa sajda Haram hai. Or Muhammad (SAW) Ny kabi kesi bot ko sajda nhin kia.. Muhammad (SAW) to bot Tora kerty thay.... Oa Hajr e aswad koe bot nhin hai... or na koe es holy stone ko sajda kerta hai....
    07/02/2014 9:49:52 PM Reply

Post a Comment

English Blog